تازہ تحاریر
میڈیا سرور بنانا سیکھیں

میڈیا سرور بنانا سیکھیں

میڈیا سرور یا میڈیا شئیرنگ ویب سائٹس سے ہمارا روز مرہ میں واسطہ پڑتا ہے مثلا آپ ایک 

ویب سائٹ پر گئے جس میں آپ نے صرو ویڈیوز دیکھی یا آپ ایک ایسی ویب سائٹ پر گئے 

جہا آپ کو لا تعداد ویڈیو ملی اور ساتھ میں کچھ تصاویر اور سافٹ وئیر بھی مل گئے ایسی 

ویب سائٹ میڈیا شئیرنگ ویب سائٹ کہلاتی ہے ۔جس کی عموما مثال ہمارے ہاں یوٹیوب یا 

کوئی فافٹ وئیر ڈائنلوڈ کرنے والی ویب سائٹ ہے۔

اس کی ضرورت کیا ہے 
یہ اس لحاظ سے بہت زیادہ اہم ہے کہ ہمارے یوزر کے پاس ہمارے لوکل نیٹ ورک تک 

رسائی ہوتی ہے اور وہ اس میں پڑا ہوا ڈیتا حاصل کر سکتے ہیں یا ان کے پاس کوئی ڈیٹا 

موجود ہو وہ ہم سے شئیر کر سکتے ہیں ۔لازمی نہیں یہ صرف مویز دیکھنے کے لئے استعمال 

ہو آپ اس کو آئلائن کر کے کاروباری مقصاد کے لئے استعمال کر سکتے ہیں۔

فوائد
 اگر اس کا فائدہ لوکل نیٹ ورک کے لحاظ سے دیکھا جائے تو اگر ہمارے پاس 300 یوزر ہیں 

اور آپ کا میڈیا سرور آپ ٹو ڈیٹ ہے تو ہماری ماہانہ مڈیا سرور کی ڈائنلوڈنگ 1 ٹیرا بائٹ ( 

100جی بی ) تک ہوتی ہے ۔ یعنی اس کو استعمال کر کے آپ انٹرنیٹ کے استعمال کو کم کر 

سکتے ہیں ۔
آگر آپ کے پاس انٹرنیٹ اچھا ہے تو آپ اس کو آئنلان بھی کر سکتے ہیں جیسا کہ کئی مواقع 

پر ہمارے پاس ڈیٹا زیادہ ہوتا تھا اور ہوسٹنگ کے پیسے بچانے کے لئے ہم اس کو آپنے 

کمپیوٹر پر ہوسٹ کرتے تھے ۔
اس کے اور بھی بہت زیادہ فوائد ہیں لکھنے میں دشواری کی وجہ سے ویڈیو میں زیادہ بہتر 

طریقہ سے بات کی گئی ہے۔

ہارڈ وئیر
اس کے لئے ہمیں ضرورت ہو گی 
ایک کمپیوٹر جس میں ایک اچھا پروسیسر نصب ہو (اگر استعمال زیادہ ہے)
ریم ( 2 گیگا بائٹ)
ہارڈ ڈرائیو(ڈیٹا کے حساب سے 1 ٹی بی یا 2ٹی بی )
آپریٹنگ سسٹم (ونڈوز 8 یا اس سے زیادہ )

بحثیت پاکستانی قوم ہم شرمندہ ہیں

بحثیت پاکستانی قوم ہم شرمندہ ہیں

چائنہ میں سم کارڈ دوبارہ جاری کروانے کے مراحل

شی: سر آپ کو سم دوبارہ حاصل کرنے کیلئے ان کا پاسپورٹ ساتھ لانا ہوگا۔ 

می: ہم ساتھ ہی لائے ہیں، یہ لیجیئے۔ 
شی: ان کا سم کارڈ تو بالکل ابتدائی پیکیج یعنی 30 مفت منٹ اور 1000 ایم بی ڈیٹا کے ساتھ ہے۔ ذرا بہتر پیکیج دیکھ لیجیئے
می: نہیں، یہ ہاؤس وائف ہیں اور گھر پر وائی فائی موجود ہے۔ 
شی: کیا خیال ہے، میں انہیں ایک مفت موبائل سیٹ دلوا دوں؟
می: اگر ہے تو شکریہ
شی: اچھا میں انہیں ساتھ میں 66 جی بی مفت ڈیٹا بھی دے رہی ہوں، ہر مہینے ایک جی بی ہوگا۔ اگر یہ راحت محسوس کریں تو پھر چھ ماہ کے بعد پیسوں کے ساتھ یہ والا پیکیج کرا لیں
می: ٹھیک ہے
شی: آپ ان کے خاوند ہی ہیں ناں؟
می: جی
شی: اپنا پاسپورٹ دیجیئے
می: یہ لیجیئے
شی: آپ کے نام پر دو سم کارڈ جاری ہیں، کونسا نمبر زیادہ استعمال کرتے ہیں؟
می: اوپر والا پہلا
 
شی: اچھا میں آپ لوگوں کے تینوں نمبروں کو ایک فیمیلی سرکل میں اکٹھا کر کے تین ڈیجٹ کے تین نمبر (661، 662، 663) دے رہی ہوں، آپ لوگ آپس میں ان تین ڈیجیٹ کو ڈائل کر کے ملک بھر میں کہیں سے بھی مفت اور لا محدود بات کر سکیں گے۔ 
می: یہ تو بہت اچھا ہے، شکریہ
شی: آپ کا پیکیج صرف ایک جی بی کا کیوں ہے؟ کچھ بہتر پیکیج بتاؤں؟
 
می: میں گھر اور دفتر میں وائی فائی استعمال کرتا ہوں۔ موبائل ڈیٹا بہت کم استعمال کرتا ہوں، یہ کافی ہے۔
 
شی: اچھا میں آپ کا ڈیٹا ڈبل کر رہی ہوں، یہ اضافی چھ مہینے کیلئے بالکل مفت ہوگا۔ بعد میں جیسے آپ کو بہتر لگے کیجیئے گا۔ 
می: بہت مہربانی آپ کی۔ 
شی: تو پھر کچھ موبائل بیلینس ہی ڈلوا لیجیئے۔ 
می: جی، تینوں نمبروں میں سو سو کا بیلینس ڈال دیجیئے۔ 
شی: آپ کی تشریف آوری کا شکریہ۔ 
می: آپ بہت اچھی ہیں، آپ نے ہمیں بہت اچھی سروس دی۔ 
 
شی: نہیں نہیں، میں نے فقط اپنا کام کیا ہے، امید ہے آپ کو مجھ سے کوئی شکایت نہیں ہوئی ہوگی۔
 یہ روداد بھائی محمد سلیم کی ہے جسے میں نے اپنے بلاگ پر شائع کیا ہے 
سی پیک اور چینی کھانے

سی پیک اور چینی کھانے


مرار جی ڈیسائی کے نام سے انڈیا میں ایک وزیر اعظم ہو گزرے ہیں۔ سیاست میں تو انہوں نے کوئی اچھا یا برا نام کمایا یا نہیں مگر اپنے پسندیدہ مشروب کی وجہ سے ہمیشہ امر رہیں گے۔ اور تو اور ان کے عہد میں ہمارے منبر و مساجد سے بھی خطیبوں کے یوں کوسنے سننے کو ملتے تھے: ارے او پاکستانیو، تم انڈین گانے پسند کرتے ہو اب انڈین کھانے بھی تو پسند کرو۔
سی پیک کا دور دورہ ہے، راہداری کے ساتھ ساتھ جہاں کئی کاروبار کھلیں گے، لاکھوں کو روزگار ملے گا وہیں چینی کھانوں کا بھی کاروبار پھیلے گا۔ آپ کے متوقع رجحان کو دیکھتے ہوئے چند معروف چینی کھانوں کا تعارف آپ کی نذر:
1: شارک فن سوپ
 
امراء کا کھانا ہے۔ شارک مچھلی کے (واحد کار آمد) پر کاٹ کر باقی کی ساری شارک کو مرنے کیلئے سمندر میں ہی چھوڑ دیا جاتا ہے جو حرکت نا کر سکنے کی وجہ سے تہہ میں بیٹھے بیٹھے ہی مر جاتی ہے۔ شارک کی نسل معدوم ہونے میں اس ڈش کا بہت بڑا ہاتھ ہوگا۔ ان پروں کا سوپ پی کر چینی اپنے آپ کو جوا ن جوان محسوس کرتے ہیں۔
2: پھئی دان 












 ریت، نمک اور مٹی کے ملغوبے میں کئی ہفتے دبا کر رکھے گئے ان انڈوں کو ہزار سالہ 
پرانے انڈے بھی کہتے ہیں۔ ازمنہ قدیم سے یہ بد بودار سڑانڈ والے انڈے چینیوں کی ہمیشہ ہی پسندیدہ خوراک رہے ہیں، انڈوں کی زردی جل کر گہری سبز جبکہ سفیدی سیاہ ہو جاتی ہے۔ ایسے ہی یا سلائس کاٹ کر نوڈلز پر رکھ کر کھائے جاتے ہیں۔ ہانگ کانگ میں اگر کوئی آپ کو یہ انڈہ کھانے کیلئے پیش کردے تو اس کا مطلب ہوتا کہ آپ اسے دل و جان سے عزیز ہیں۔
3: ٹرٹل جیلی
 
کچھووں کو کم از کم بارہ گھنٹے مسلسل ابال کر بنا ہوا یہ گاڑھا اور جیلی جیسا سوپ عام و خاص کی پسندیدہ خوراک ہے۔


4: چھاؤو دوفو
 
انتہائی بد بو دار سویابین کا پنیر، جس سے پرانے تارہ میرا تیل میں تلتے وقت اٹھتے ہوئے بھبھکے آپ کو ناک منہ لپیٹ کر جتنا بھاگ جانے پر مجبور کر دیں، کھانے میں اتنا ہی لذیذ ہے۔ چینی اس کی جہاں بدبو سونگھ لیں اسے کھانے کیلئے وہیں قدم گاڑ دیں۔
5: ماؤ دان 
 
ایسا انڈہ جس میں بچہ مکمل ہوچکا ہو کو ابال کر کھانا گورمے جیسی لذت پانا شمار ہوتا ہے۔ صحت افزا شمار ہوتا ہے اور توانائی کیلئے کھایا جاتا ہے۔

6: تھونگ زی دان
اسے ورجن بوائے ایگ بھی کہتے ہیں۔ انڈوں کو چھوٹے اور  خاص طور ایسے بچوں جن کی عمر دس سال سے کم ہو کے پیشاب میں ابال کر کھائے جاتے ہیں۔ کئی امراض کیلئے شافی شمار ہوتے ہیں۔ بس سٹاپ یا آمدو رفت والی جگہوں پر خوب بکتے ہیں۔

7: سنیک سوپ
 
سانپوں کے گوشت سے تیار کردہ یہ سوپ ایک زمانے تک تو رئیسوں کی حرارت آور غذا شمار ہوتی تھی مگر اب سانپوں کی آسان فارمنگ کی وجہ سے ہر ایک کی دسترس میں ہے۔ سردیوں میں حرارت کیلئے پیا جاتا ہے۔

8: لیو رو خوا شاؤ یا ڈنکی میٹ برگر
 
جو بیجنگ میں جائے اور وہاں کے لذیذ گدھے کے گوشت کا برگر کھائے بغیر آ جائے ایسا ہی ہے جیسے وہ بیجنگ گیا ہی نہیں۔ اب گدھے کے نایاب ہوتے گوشت کی وجہ سے نچلے طبقے کی دسترس سے نکلتے جا رہے ہیں تاہم انہیں کھانا ہر ایک کا خواب ہوتا ہے۔

9: ڈک بیک
 
مانگ کے لحاظ سے معروف اس ڈش کو آدمی بس دیکھ دیکھ کر یہی سوچتا ہی رہ جائے کہ جس نے ان چونچوں کو کھانے کیلئے آرڈر کیا ہے اسے کتنا ایک گوشت مل پائے گا ان کو کھا کر۔ تاہم اب یہ یہ مہنگے ہوٹلوں پر ہی کھانے کیلئے ملتی ہیں۔

10: ڈک فیٹ / چکن فیٹ
 
تازہ پکے ہوئے، ابلے ہوئے یا پھر پکا کر یا ابال کر ایئر ٹائٹ پیکنگ میں ہر چھوٹی بڑی دکان پر بکتے یہ پنجے سب چھوٹے بڑوں کی پہلی پسندیدہ اور مرغوب غذا ہیں۔ بس یا گاڑی کے اڈے پر کسی بھی مسافر کی تلاشی لے لو، کچھ اور ملے یا نا ملے چالیس پچاس یہ پنجے ضرور مل جائیں گے۔


 یہ تحریر محمد سلیم بھائی نے فیس بک پر شائع کی تھی تو مزیدار کھانوں سے تعارف کے لئے آپ کے ساتھ اس کو شئیر کر رہا ہوں ۔اگر پکائیں تو ہمیں یاد رکھنا بھول جائیں ۔ شکریہ  :P
قصہ ذہانت کا۔

قصہ ذہانت کا۔

دنیا باتوں پر چلتی ہے۔

ناسا نے مریخ پر جانے کے خواہشمند افراد کے انٹرویو لینے کا فیصلہ کیا۔ صرف ایک ہی آدمی جا سکتا تھا اور واپسی کا کوئی بندوبست بھی نہیں تھا۔ جانے والے شخص کو اپنی خوراک اور پانی ساتھ لے جا کر بقایا زندگی مریخ پر رہ کر زمین والوں کو معلومات فراہم کرنی تھیں۔

 سب سے پہلا امیدوار پیشے کے لحاظ سے انجینئیر تھا۔ چند رسمی سوالات کے بعد اس سے دریافت کیا گیا کہ وہ سفر کا معاوضہ کتنی رقم تک وصول کرنے کی توقع کر رہا ہے۔ "ایک ملین ڈالر۔ اور یہ ساری رقم میں خلائی تحقیق کے ادارے کو ڈونیٹ کر کے جاؤں گا۔ یہ میرا زمین کو آخری تحفہ ہوگا"۔
"ایک ملین ڈالر کینسر کے علاج کی ریسرچ فاؤنڈیشن کو ڈونیٹ کروں گا تاکہ میں اپنے پیشے کو آگے نہ بھی چلا سکوں تب بھی انسانیت کی خدمت میرے نام سے چلتی رہے"

دوسرا امیدوار پیشے کے اعتبار سے ڈاکٹر تھا۔
 " آپ ہم سے کتنی رقم بطور معاوضہ وصول کرنے کی توقع کرتے ہیں ؟ "۔ ڈاکٹر نے رسانیت سے جواب دیا"دو ملین ڈالر۔ ایک ملین ڈالر میں اپنے خاندان والوں کو دے کر جاؤں گا تاکہ میرے بعد انہیں کسی دشواری کا سامنا نہ کرنا پڑے اور بقیہ ایک ملین ڈالر کینسر کے علاج کی ریسرچ فاؤنڈیشن کو ڈونیٹ کروں گا تاکہ میں اپنے پیشے کو آگے نہ بھی چلا سکوں تب بھی انسانیت کی خدمت میرے نام سے چلتی رہے"۔
 تیسرا امیدوار جب انٹرویو لینے والے کے سامنے آیا تو معلوم پڑا کہ وہ پاکستانی ہیں۔ پچھلے امیدواروں کی طرح ان سے پہلے رسمی سوالات پوچھے گئے اور پھر وہی سوال ہوا کہ پاکستانی صاحب اپنی خدمات کا کیا معاوضہ وصول کریں گے۔ صاحب نے پہلے تو ادھر ادھر دیکھا۔ پھر انٹرویو لینے والے صاحب کے کان کے پاس اپنا منہ لے جا کر سرگوشی جتنی آواز میں کہا "تین ملین ڈالر"۔ انٹرویو لینے والے شخص نے تعجب آمیز نگاہوں سے سرگوشی کو ملاحظہ کیا اور پھر اتنی ہی آہستہ آواز میں پوچھا" آپ ان دونوں پچھلے امیدواروں سے بھی زیادہ معاوضہ مانگ رہے ہیں ، اس کی کوئی خاص وجہ؟"۔
"جی ہاں"۔
 پاکستانی نے نہایت اطمینان سے دوبارہ سرگوشی کی۔ "آپ مجھے تین ملین ڈالر دیں۔ اس میں سے ایک ملین ڈالر آپکا اور ایک ملین ڈالر میرا۔ باقی بچنے والا ایک ملین ڈالر انجینئیر کو دے کر اسے مریخ پر بھیج دیں گے. منقول
خوبصورت مگر سادہ لاگ ان پیج

خوبصورت مگر سادہ لاگ ان پیج

پیش خدمت ہے میکروٹک لاگ ان پیج .اس پیج کی کچھ تصویری جھلکیاں ملاحضہ ہوں۔

اگر آپ اس پیج میں تبدیلی کرنا چاہتے ہیں تو آپ اس لنک کو ملاحضہ کریں۔



اس پیج کو آپ یہاں سے حاحل کر سکتے ہیں۔

 mikrotik simple login page

نوٹ: جملہ حقوق محفوظ ہیں۔اس آرٹیکل کو بغیر اجازتِ مصنف کسی اور جگہ شائع نہیں کیا جا سکتا۔  از محمد اسفند

میکروٹک میں کمانڈ لائن کا استعمال اور دیگر معلومات

میکروٹک میں کمانڈ لائن کا استعمال اور دیگر معلومات

میکروٹک میں کمانڈز کا تعارف

اسلام علیکم 
اس ویڈیو میں میکروٹک کمانڈ لائن کا تعارف کروایا گیا ہے ۔اس ویڈیو کو دیکھنے کے بعد آپ میکروٹک میں کمانڈزکی اہمیت س واقف ہو جائیں گیں اس کے علاوہ اس ویڈیو میں کمانڈز کے بیسک(شروعاتی)استعمال کو دیکھایا گیا ہے۔

اس ویڈیو میں 
  • میکروٹک کو کمانڈ کے ذریعے سے کنفگر کرنا
  • میکروٹک میں کمانڈ لائین سے رولز بنانا
  • میکروٹک میں کمانڈ لائن سے آئی پی ایڈریسز ایڈ کرنا
  • میکروٹ میں کمانڈ لائن سے ڈی این اس کو کنفگر کرنا

بتایا گیا ہے۔


آپ سب کے پر زور اصرار پر میکروٹک کا مکمل کورس بغیر کسی قمیت کے پیش کیا جا رہا ہے۔
امید کرتا ہوں آپ سب اس سے مستفید ہوں گیں۔اس کے ساتھ ساتھ میں گزارش کرنا چاہوں گا کہ اگر آپ کو یہ اچھا لگے تو اس کو شئیر بھی کریں اور جتنا ہوسکے مجھے بھی ڈونیشن کر دیں۔ڈونیشن کرنے کے لئے آپ مجھے سے رابطہ فارم کے ذریعے سے رابطہ کر سکتے ہیں۔

نوٹ اس ویڈیو کے لئے مجھ سے  نوید ہاشمی صاحب نے  رابطہ کیا اور اس ویڈیو کے لئے ڈونیشن دیا اور اس ویڈیو کو عوام الناس کے لئے اپلوڈ کرنے کا کہا  ۔اس لئے نوید  ہاشمی صاحب کو اپنی دعاؤں میں لازمی یاد رکھیں۔


نوٹ: جملہ حقوق محفوظ ہیں۔اس آرٹیکل کو بغیر اجازتِ مصنف کسی اور جگہ شائع نہیں کیا جا سکتا۔  از محمد اسفند