پاکستانی فوج کے جوانوں کو پاگل کہوں‌یا...


Pakistani soldier mad or?

اسلام علیکم: آج میں نے جب یہ مضمون پڑھا تو مجھے سمجھ نہی آئی کہ پاکستانی فوج کے جوانوں کو پاگل کہوں‌یا جنون کی حد تک محب وطن کہوں.کیوں کہ وہ ان حالات میں پاکستان کی سرحدوں کی حفاظت کر رہیں ہیں‌ ہم انڈیا کو پسندیدہ ملک کا نام دے رہیں ہیں دو قومی نظریے کو بھول چکے ہیں.ہمارے ملک کے نوجوان ہمارے ملک کی فوج کے خلاف ہیں.اور انڈیا کی تہذیب،تمدن،ثقافت کو آپنا رہے ہیں.رب رحم کرے ہمارے ملک کے حالات ایسے ہو چکے ہیں کہ ہمارے ہی ملک کا ٹی وی چینل ہمارے فوجی اداروں کے خلاف بول رہا ہے.اور یہ جوان پھر بھی ملک کلئے جانیں دے رہے ہیں
ﮐﯿﺎ ﺁﭖ ﺟﺎﻧﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﺩﻧﯿﺎ ﮐﺎ ﻭﺍﺣﺪ ﻣﻠﮏ ﮨﮯﺟﺴﮑﯽ ﺳﺐ ﺳﮯ ﺑﮍﯼ ﺍﯾﮑﭩﯿﻮ ﺟﻨﮕﯽ ﺳﺮﺣﺪ ﮨﮯ ﺟﻮ ﮐﮧ 3600 ﮐﻠﻮ ﻣﯿﭩﺮ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﺑﺪﻗﺴﻤﺘﯽ ﺳﮯ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﮨﯽ ﺩﻧﯿﺎ ﮐﺎ ﻭﺍﺣﺪ ﻣﻠﮏ ﮨﮯ ﺟﻮ ﺑﯿﮏ ﻭﻗﺖ ﺗﯿﻦ ﺧﻮﻓﻨﺎﮎ ﺟﻨﮕﯽ ﮈﺍﮐﭩﺮﺍﺋﯿﻨﺰ ﮐﯽ ﺯﺩ ﻣﯿﮟ ﮨﮯ ﺟﺲ ﮐﮯ ﺑﺎﺭﮮ ﻣﯿﮟ ﺑﮩﺖ ﺗﮭﻮﮌﮮ ﻟﻮﮒ
ﺟﺎﻧﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﺁﺋﯿﮯ ﺁﺝ ﺫﺭﺍ ﺍﺳﮑﮯ ﺑﺎﺭﮮ ﻣﯿﮟ ﺁﭘﮑﻮ ﺑﺘﺎﺗﮯ ﮨﯿﮟ

ﮐﻮﻟﮉ ﺳﭩﺎﺭﭦ ﮈﺍﮐﭩﺮﺍﺋﯿﻦ ( Cold Start doctrine )

پہلے نمبر پرﮐﻮﻟﮉ ﺳﭩﺎﺭﭦ ﮈﺍﮐﭩﺮﺍﺋﯿﻦ ﮨﮯ ﺟﻮ ﺍﻧﮉﯾﻦ ﺟﻨﮕﯽ ﺣﮑﻤﺖ ﻋﻤﻠﯽ ﮨﮯ ﺟﺴﮑﮯ ﻟﯿﮯ ﺍﻧﮉﯾﺎ ﮐﯽ ﮐﻞ ﻓﻮﺝ ﮐﯽ 7 ﮐﻤﺎﻧﮉﺯ ﻣﯿﮟ ﺳﮯ ﭼﮫ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻧﯽ ﺳﺮﺣﺪ ﭘﺮ ﮈﭘﻠﻮﺋﯿﮉ ﮨﻮ ﭼﮑﯽ ﮨﯿﮟ ﯾﮧ ﺍﻧﮉﯾﺎ ﮐﯽ ﺗﻘﺮﯾﺒﺎً 80 ﻓﯿﺼﺪ ﺳﮯ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﻓﻮﺝ ﺑﻨﺘﯽ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﮈﺍﮐﭩﺮﺍﺋﯿﻦ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﺍﻧﮉﯾﻦ ﻓﻮﺝ ﮐﯽ ﻣﺸﻘﯿﮟ ، ﻓﻮﺟﯽ ﻧﻘﻞ ﻭ ﺣﻤﻞ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﺳﮍﮐﻮﮞ ،ﭘﻠﻮﮞ ﺍﻭﺭ ﺭﯾﻠﻮﮞ ﻻﺋﻨﻮﮞ ﮐﯽ ﺗﻌﻤﯿﺮ ﺍﻭﺭ ﺍﺳﻠﺤﮯ ﮐﮯ ﺑﮩﺖ ﺑﮍﮮ ﺑﮍﮮ ﮈﭘﻮ ﻧﮩﺎﯾﺖ ﺗﯿﺰ ﺭﻓﺘﺎﺭﯼ ﺳﮯ ﺑﻨﺎﺋﮯ ﺟﺎ ﺭﮨﮯ ﮨﯿﮟ ﺍﺱ ﮈﺍﮐﭩﺮﺍﺋﻦ ﮐﮯ ﺗﺤﺖ ﺻﻮﺑﮧ ﺳﻨﺪﮪ ﻣﯿﮟ ﺟﮩﺎﮞ ﺍﻧﮉﯾﺎ ﮐﻮ ﺟﻐﺮﻓﯿﺎﺋﯽ ﮔﮩﺮﺍﺋﯽ ﺣﺎﺻﻞ ﮨﮯ ﻭﮦ
ﺗﯿﺰﯼ ﺳﮯ ﺩﺍﺧﻞ ﮨﻮﮐﺮ ﺳﻨﺪﮪ ﮐﻮ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﺳﮯ ﮐﺎﭨﺘﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﺑﻠﻮﭼﺴﺘﺎﻥ ﮔﻮﺍﺩﺭ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ ﺑﮍﮬﯿﮟ ﮔﯽ ﺍﻭﺭ ﻣﻘﺎﻣﯽ ﻃﻮﺭ ﭘﺮ ﺍﻧﮑﻮ ﺳﻨﺪﮪ ﻣﯿﮟ ﺟﺴﻘﻢ ﺍﻭﺭ ﺑﻠﻮﭼﺴﺘﺎﻥ ﻣﯿﮟ ﺑﯽ ﺍﯾﻞ ﺍﮮ ﮐﯽ ﻣﺪﺩ ﺣﺎﺻﻞ ﮨﻮﮔﯽ ۔۔۔۔۔ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﮐﻮ ﺍﺻﻞ ﺍﻭﺭ ﺳﺐ ﺳﮯ ﺑﮍﺍ ﺧﻄﺮﮦ ﺍﺳﯽ ﺳﮯ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﭘﺎﮎ ﺁﺭﻣﯽ ﺍﻧﮉﯾﻦ ﻓﻮﺝ ﮐﯽ ﺍﺳﯽ ﻧﻘﻞ ﻭ ﺣﺮﮐﺖ ﮐﻮ ﻣﺎﻧﯿﭩﺮ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﺍﭘﻨﯽ ﺟﻮﺍﺑﯽ ﺣﮑﻤﺖ ﻋﻤﻠﯽ ﺗﯿﺎﺭ ﮐﺮ ﺭﮨﯽ ﮨﮯ ۔۔۔۔۔۔ ﺁﭖ ﻧﮯ ﺳﻨﺎ ﮨﻮﮔﺎ 
ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﺁﺭﻣﯽ ﮐﯽ " ﻋﻈﻢ ﻧﻮ "ﻣﺸﻘﻮﮞ ﮐﮯ ﺑﺎﺭﮮ ﻣﯿﮟ ﺟﻮ ﭘﭽﮭﻠﮯ ﮐﭽﮫ ﺳﺎﻝ ﺳﮯ ﺑﺎﻗﺎﻋﺪﮔﯽ ﺳﮯ ﺟﺎﺭﯼ ﮨﯿﮟ ۔۔۔۔۔۔۔ ﯾﮧ ﺍﻧﮉﯾﺎ ﮐﯽ ﮐﻮﻟﮉ ﺳﭩﺎﺭﭦ ﮈﺍﮐﭩﺮﺍﺋﯿﻦ ﮐﺎ ﺟﻮﺍﺏ ﺗﯿﺎﺭ ﮐﯿﺎ ﺟﺎ ﺭﮨﺎ ﮨﮯ ﺟﺴﮑﮯ ﺗﺤﺖ ﭘﺎﮎ ﺁﺭﻣﯽ ﺟﺎﺭﺣﺎﻧﮧ ﺩﻓﺎﻉ ﮐﯽ ﺗﯿﺎﺭﯼ ﮐﺮ ﺭﮨﯽ ﮨﮯ ۔۔۔۔۔ ﮔﻮ ﮐﮧ ﺍﺱ ﻣﻌﺎﻣﻠﮯ ﻣﯿﮟ ﻃﺎﻗﺖ ﮐﺎ ﺗﻮﺍﺯﻥ ﺑﺮﯼ ﻃﺮﺡ ﮨﻤﺎﺭﮮ ﺧﻼﻑ ﮨﮯ ﺍﻧﮉﯾﺎ ﮐﯽ ﮐﻢ ﺍﺯ ﮐﻢ ﺩﺱ ﻻﮐﮫ ﻓﻮﺝ ﮐﮯ ﻣﻘﺎﺑﻠﮯ ﻣﯿﮟ ﮨﻤﺎﺭﯼ ﺻﺮﻑ ﺩﻭ ﺳﮯ ﮈﮬﺎﺋﯽ ﻻﮐﮫ
ﻓﻮﺝ ﺩﺳﺘﯿﺎﺏ ﮨﮯ ﺑﺎﻗﯽ ﺍﻣﺮﯾﮑﻦ " ﺍﯾﻒ ﭘﺎﮎ " ﮈﺍﮐﭩﺮﺍﺋﯿﻦ ﮐﯽ ﺯﺩ ﻣﯿﮟ ﮨﮯ ۔۔۔۔۔۔ !!

ﺍﻣﺮﯾﮑﻦ ﺍﯾﻒ ﭘﯿﮏ ﮈﺍﮐﭩﺮﺍﺋﻦ ( Amrican afpak doctrine )

ﺑﺎﺭﺍﮎ ﺍﻭﺑﺎﻣﺎ ﺍﯾﮉﻣﻨﺴﭩﺮﯾﺸ ﻦ ﮐﯽ ﺟﻨﮕﯽ ﺣﮑﻤﺖ ﻋﻤﻠﯽ ﮨﮯﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﮐﮯ ﺧﻼﻑ ﺟﺲ ﮐﮯ ﺗﺤﺖ ﺍﻓﻐﺎﻥ ﺟﻨﮓ ﮐﻮ ﺑﺘﺪﺭﯾﺞ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﮐﮯ ﺍﻧﺪﺭ ﻟﮯ ﮐﺮ ﺟﺎﻧﺎ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﻣﯿﮟ ﭘﺎﮎ ﺁﺭﻣﯽ ﮐﮯ ﺧﻼﻑ ﮔﻮﺭﯾﻼ ﺟﻨﮓ ﺷﺮﻭﻉ ﮐﺮﻭﺍﻧﯽ ﮨﮯ ۔۔۔ ﺩﺭﺣﻘﯿﻘﺖ ﯾﮩﯽ ﻭﮦ ﮈﺍﮐﭩﺮﺍﺋﻦ ﮐﮯ ﺟﺲ ﮐﮯ ﺗﺤﺖ ﺍﺱ ﻭﻗﺖ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﮐﯽ ﮐﻢ ﺍﺯ ﮐﻢ ﺩﻭ ﻻﮐﮫ ﻓﻮﺝ ﺣﺎﻟﺖ ﺟﻨﮓ ﻣﯿﮟ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﺏ ﺗﮏ ﮨﻢ ﮐﻢ ﺍﺯ ﮐﻢ ﺍﭘﻨﮯ 20 ﮨﺰﺍﺭ ﻓﻮﺟﯽ ﮔﻨﻮﺍ ﭼﮑﮯ
ﮨﯿﮟ ﺟﻮ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﮐﯽ ﺍﻧﮉﯾﺎ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﻟﮍﯼ ﺟﺎﻧﯽ ﻭﺍﻟﯽ ﺗﯿﻨﻮﮞ ﺟﻨﮕﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺷﮩﯿﺪ ﮨﻮﻧﮯ ﻭﺍﻟﻮﮞ ﮐﯽ ﻣﺠﻤﻮﻋﯽ ﺗﻌﺪﺍﺩ ﺳﮯ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﮨﮯ ۔۔۔۔ ﺍﺱ ﺟﻨﮓ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﺍﻣﺮﯾﮑﮧ ﺍﻭﺭ ﺍﻧﮉﯾﺎ ﮐﺎ ﺁﭘﺲ ﻣﯿﮟ ﺁﭘﺮﯾﺸﻨﻞ ﺍﺗﺤﺎﺩ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﺳﺮﺍﺋﯿﻞ ﮐﯽ ﺗﯿﮑﻨﯿﮑﯽ ﻣﺪﺩ ﺣﺎﺻﻞ ﮨﮯ ۔۔۔۔۔ ﺍﺳﮑﮯ ﻟﯿﮯ ﮐﺮﻡ ﺍﻭﺭ ﮨﻨﮕﻮ ﻣﯿﮟ ﺷﯿﻌﮧ ﺳﻨﯽ ﻓﺴﺎﺩﺍﺕ ﮐﺮﻭﺍﺋﮯ ﮔﺌﮯ ﺍﻭﺭ ﻭﺍﺩﯼ ﺳﻮﺍﺕ ﻣﯿﮟ ﻧﻔﺎﺫ ﺷﺮﯾﻌﺖ ﮐﮯ ﻧﺎﻡ ﭘﺮ ﺍﯾﺴﮯ ﮔﺮﻭﮦ ﮐﻮ ﻣﺴﻠﻂ ﮐﯿﺎ ﮔﯿﺎ ﺟﻨﮩﻮﮞ
ﻧﮯ ﻭﮨﺎﮞ ﻋﻮﺍﻡ ﭘﺮ ﻣﻈﺎﻟﻢ ﮈﮬﺎﺋﮯ ﺍﻭﺭ ﻓﺴﺎﺩ ﺑﺮﭘﺎ ﮐﯿﺎ ﺟﺲ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﻣﺠﺒﻮﺭﺍً ﭘﮩﻠﯽ ﺑﺎﺭ ﭘﺎﮎ ﻓﻮﺝ ﮐﻮ ﺍﻧﮑﮯ ﺧﻼﻑ ﺍﻥ ﻭﺍﺩﯾﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺩﺍﺧﻞ ﮨﻮﻧﺎ ﭘﮍﺍ ۔۔۔۔۔ ﭘﺎﮎ ﻓﻮﺝ ﻧﮯ ﻋﻤﻠﯽ ﻃﻮﺭ ﭘﺮ ﺍﻧﮑﻮ ﭘﯿﭽﮭﮯ ﺩﮬﮑﯿﻞ ﺩﯾﺎ ﻟﯿﮑﻦ ﻧﻈﺮﯾﺎﺗﯽ ﻃﻮﺭ ﭘﺮ ﺍﺑﮭﯽ ﺑﮭﯽ ﺍﻧﮑﻮ ﺑﮩﺖ ﺳﮯ ﺣﻠﻘﻮﮞ ﮐﯽ ﺑﮭﺮﭘﻮﺭ ﺳﭙﻮﺭﭦ ﺣﺎﺻﻞ ﮨﮯ ﺟﺴﮑﯽ ﻭﺟﮧ ﺳﮯ ﻋﻮﺍﻡ ﺍﭘﻨﯽ ﺁﺭﻣﯽ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﺍﺱ ﻃﺮﺡ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﮭﮍﯼ ﺟﯿﺴﺎ ﮨﻮﻧﺎ ﭼﺎﮨﺌﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﺳﮑﯽ ﻭﺟﮧ ﺗﯿﺴﺮﯼ ﺟﻨﮕﯽ ﮈﺍﮐﭩﺮﺍﺋﻦ ﮨﮯ ﺟﺲ ﮐﮯ ﺫﺭﯾﻌﮯ ﺍﻣﺮﯾﮑﮧ ﺍﻭﺭ ﺍﺳﮑﮯ ﺍﺗﺤﺎﺩﯼ ﭘﺎﮎ ﺁﺭﻣﯽ ﭘﺮ ﺣﻤﻠﮧ ﺁﻭﺭ ﮨﯿﮟ ﺍﺳﮑﻮ ﻓﻮﺭﺗﮫ ﺟﻨﺮﺯﯾﺸﻦ ﻭﺍﺭ ﮐﮩﺎ ﺟﺎﺗﺎ
ﮨﮯ !!

ﻓﻮﺭﺗﮫ ﺟﻨﺮﯾﺸﻦ ﻭﺍﺭ ( Fourth-generation warfare )

ﺍﯾﮏ ﻧﮩﺎﯾﺖ ﺧﻄﺮﻧﺎﮎ ﺟﻨﮕﯽ ﺣﮑﻤﺖ ﻋﻤﻠﯽ ﮨﮯ ﺟﺴﮑﮯ ﺗﺤﺖ ﻣﻠﮏ ﮐﯽ ﺍﻓﻮﺍﺝ ﺍﻭﺭ ﻋﻮﺍﻡ ﻣﯿﮟ ﻣﺨﺘﻠﻒ ﻃﺮﯾﻘﻮﮞ ﺳﮯ ﺩﻭﺭﯼ ﭘﯿﺪﺍ ﮐﯽ ﺟﺎﺗﯽ ﮨﮯ ﻣﺮﮐﺰﯼ ﺣﮑﻮﻣﺘﻮﮞ ﮐﻮ ﮐﻤﺰﻭﺭ ﮐﯿﺎ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ ﺻﻮﺑﺎﺋﯿﺖ ﮐﻮ ﮨﻮﺍ ﺩﮮ ﺟﺎﺗﯽ ﮨﮯ ، ﻟﺴﺎﻧﯽ ﺍﻭﺭ ﻣﺴﻠﮑﯽ ﻓﺴﺎﺩﺍﺕ ﮐﺮﻭﺍﺋﮯ ﺟﺎﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﻋﻮﺍﻡ ﻣﯿﮟ ﻣﺨﺘﻠﻒ ﻃﺮﯾﻘﻮﮞ ﺳﮯ ﻣﺎﯾﻮﺳﯽ ﺍﻭﺭ ﺫﮨﻨﯽ ﺧﻠﻔﺸﺎﺭ ﭘﮭﯿﻼﯾﺎ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ ۔۔۔۔ ﺍﺳﮑﮯ ﺫﺭﯾﻌﮯ ﮐﺴﯽ ﻣﻠﮏ ﮐﺎ ﻣﯿﮉﯾﺎ ﺧﺮﯾﺪﺍ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﺳﮑﮯ ﺫﺭﯾﻌﮯ ﻣﻠﮏ ﻣﯿﮟ ﺧﻠﻔﺸﺎﺭ ، ﺍﻧﺎﺭﮐﯽ ﺍﻭﺭ ﺑﮯ ﯾﻘﯿﻨﯽ ﮐﯽ ﮐﯿﻔﯿﺖ ﭘﯿﺪﺍ ﮐﯽ ﺟﺎﺗﯽ ﮨﮯ ۔۔۔۔۔۔ ﻓﻮﺭﺗﮫ ﺟﻨﺮﯾﺸﻦ ﻭﺍﺭ ﮐﯽ ﻣﺪﺩ ﺳﮯ ﺍﻣﺮﯾﮑﮧ ﻧﮯ ﭘﮩﻠﮯ ﯾﻮﮔﻮﺳﻼﻭﯾﮧ ، ﻋﺮﺍﻕ ﺍﻭﺭ ﻟﯿﺒﯿﺎ ﮐﺎ ﺣﺸﺮ ﮐﺮ ﺩﯾﺎ ﺍﺏ ﺍﺱ ﺟﻨﮕﯽ ﺣﮑﻤﺖ ﻋﻤﻠﯽ ﮐﻮ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﺍﻭﺭ ﺳﺮﯾﺎ ﭘﺮ ﺁﺯﻣﺎﯾﺎ ﺟﺎ ﺭﮨﺎ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﺑﺪﻗﺴﻤﺘﯽ ﺳﮯ ﺍﻧﮩﯿﮟ ﺍﺱ ﻣﯿﮟ ﮐﺎﻓﯽ ﮐﺎﻣﯿﺎﺑﯽ ﺣﺎﺻﻞ ﮨﻮ ﭼﮑﯽ ﮨﮯ ۔۔۔ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﮐﮯ ﺧﻼﻑ ﻓﻮﺭﺗﮫ ﺟﻨﺮﯾﺸﻦ ﻭﺍﺭ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﺑﮭﯽ ﺍﻣﺮﯾﮑﮧ ، ﺍﻧﮉﯾﺎ ﺍﻭﺭ
ﺍﺳﺮﺍﺋﯿﻞ ﺍﺗﺤﺎﺩﯼ ﮨﯿﮟ ﺑﺎﺭﺍﮎ ﺍﻭﺑﺎﻣﺎ ﻧﮯ ﺍﭘﻨﮯ ﻣﻨﮧ ﺳﮯ ﮐﮩﺎ ﺗﮭﺎ ﮐﮧ ﻭﮦ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻧﯽ ﻣﯿﮉﯾﺎ ﻣﯿﮟ 50 ﻣﻠﯿﻦ ﮈﺍﻟﺮ ﺳﺎﻻﻧﮧ ﺧﺮﭺ ﮐﺮﯾﮟ ﮔﮯ ﺁﺝ ﺗﮏ ﮐﺴﯽ ﻧﮯ ﯾﮧ ﺳﻮﺍﻝ ﻧﮩﯿﮟ ﺍﭨﮭﺎﯾﺎ ﮐﮧ ﮐﺲ ﻣﻘﺼﺪ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﺍﻭﺭ ﮐﻦ ﮐﻮ ﯾﮧ ﺭﻗﻮﻡ ﺍﺩﺍ ﮐﯽ ﺟﺎﺋﻨﮕﯽ ﺟﺒﮑﮧ ﺍﻧﮉﯾﺎ ﮐﺎ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻧﯽ ﻣﯿﮉﯾﺎ ﭘﺮ ﺍﺛﺮﻭﺭﺳﻮﺥ ﺩﯾﮑﮭﺎ ﺟﺎ ﺳﮑﺘﺎ ﮨﮯ ۔۔۔۔۔۔۔ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﮐﯽ ﺳﺎﺭﯼ ﻗﻮﻡ ﺍﺱ ﺍﻣﺮﯾﮑﻦ ﻓﻮﺭﺗﮫ ﺟﻨﺮﯾﺸﻦ ﻭﺍﺭ ﮐﯽ ﺯﺩ ﻣﯿﮟ ﮨﮯ ۔۔۔ !! ﯾﮧ ﻭﺍﺣﺪ ﺟﻨﮓ ﮨﻮﺗﯽ ﮨﮯ ﺟﺴﮑﺎ ﺟﻮﺍﺏ ﺁﺭﻣﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﺩﮮ ﺳﮑﺘﯽ ﺁﺭﻣﯽ ﺍﺱ ﺻﻼﺣﯿﺖ ﺳﮯ ﻣﺤﺮﻭﻡ ﮨﻮﺗﯽ ﮨﮯ ۔۔ ﭼﻮﻧﮑﮧ ﭘﺎﮎ ﺁﺭﻣﯽ ﮐﻮ ﺍﻣﺮﯾﮑﻦ ﺍﯾﻒ ﭘﺎﮎ ﮈﺍﮐﭩﺮﺍﺋﻦ ﮐﮯ ﻣﻘﺎﺑﻠﮯ ﭘﺮ ﻧﮧ ﻋﺪﺍﻟﺘﻮﮞ ﮐﯽ ﻣﺪﺩ ﺣﺎﺻﻞ ﮨﮯ ﻧﮧ ﺳﻮﻝ ﺣﮑﻮﻣﺘﻮﮞ ﮐﯽ ﻧﮧ ﮨﯽ ﻣﯿﮉﯾﺎ ﮐﯽ ﺍﺳﻠﺌﮯ ﺑﺎﻭﺟﻮﺩ ﺑﮯ ﺷﻤﺎﺭ ﻗﺮﺑﺎﻧﯿﺎﮞ ﺩﯾﻨﮯ ﮐﮯ
ﺍﺱ ﺟﻨﮓ ﮐﻮ ﺍﺏ ﺗﮏ ﺧﺘﻢ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﯿﺎ ﺟﺎ ﺳﮑﺎ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﺳﮑﻮ ﻣﮑﻤﻞ ﻃﻮﺭ ﭘﺮ ﺟﯿﺘﺎ ﺑﮭﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﺟﺎ ﺳﮑﺘﺎ ﺟﺐ ﺗﮏ ﭘﻮﺭﯼ
ﻗﻮﻡ ﻣﻞ ﮐﺮ ﺍﺱ ﺍﻣﺮﯾﮑﻦ ﻓﻮﺭﺗﮫ ﺟﻨﺮﯾﺸﻦ ﻭﺍﺭ ﮐﺎ ﺟﻮﺍﺏ ﻧﮩﯿﮟ ﺩﯾﺘﯽ ۔۔۔۔۔۔ ﻓﻮﺭﺗﮫ ﺟﻨﺮﯾﺸﻦ ﻭﺍﺭ ﺑﻨﯿﺎﺩﯼ ﻃﻮﺭ ﭘﺮ ﮈﺱ
ﺍﻧﻔﺎﺭﻣﯿﺸﻦ ﻭﺍﺭ ﮨﻮﺗﯽ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﺳﮑﺎ ﺟﻮﺍﺏ ﺳﻮﻝ ﺣﮑﻮﻣﺘﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﻣﯿﮉﯾﺎ ﮐﮯ ﻣﺤﺐ ﻭﻃﻦ ﻋﻨﺎﺻﺮ ﺩﯾﺘﮯ ﮨﯿﮟ ۔۔۔۔۔۔ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﻣﯿﮟ ﻟﮍﯼ ﺟﺎﻧﮯ ﻭﺍﻟﯽ ﺍﺱ ﺟﻨﮓ ﻣﯿﮟ ﺳﻮﻝ ﺣﮑﻮﻣﺘﻮﮞ ﺳﮯ ﮐﻮﺋﯽ ﺍﻣﯿﺪ ﻧﮩﯿﮟ ﺍﺳﻠﺌﮯ ﻋﻮﺍﻡ ﻣﯿﮟ ﺳﮯ ﮨﺮ ﺷﺨﺺ ﮐﻮ ﺧﻮﺩ ﺍﺱ ﺟﻨﮓ ﻣﯿﮟ ﻋﻤﻠﯽ ﻃﻮﺭ ﭘﺮ ﺣﺼﮧ ﻟﯿﻨﺎ ﮨﻮﮔﺎ ۔۔۔۔۔۔۔ !! ﺍﺱ ﺣﻤﻠﮯ ﮐﺎ ﺳﺎﺩﮦ ﺟﻮﺍﺏ ﯾﮩﯽ ﮨﮯ ﮐﮧ ﻋﻮﺍﻡ ۔۔۔ "ﮨﺮ ﺍﺱ ﭼﯿﺰ ﮐﻮ ﺭﺩ ﮐﺮ ﺩﮮ ﺟﻮ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ، ﻧﻈﺮﯾﮧ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﺍﻭﺭ ﺩﻓﺎﻉ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﯾﺎ ﻗﻮﻣﯽ ﺳﻼﻣﺘﯽ ﮐﮯ ﺍﺩﺍﺭﻭﮞ ﭘﺮ ﺣﻤﻠﮧ ﺁﻭﺭ ﮨﻮ " ۔
بشکریہ اردو نامہ

تحریر کو شئیر کریں

فیس بک تبصرے

2 تبصرے:

  1. آپ کے تحریر کردہ تینوں تربیتی درس درست ہیں اور ان کی بنیاد پاکستان کے معرضَ وجود میں آنے سے قبل ہی رکھ دی گئی تھی ۔ پاکستان کے پہلے منتخب وزیر اعظم کو اسی کے تحت پاکستانیوں کے منہ بدنام کروایا گیا اور پھر اُسے قتل کروا کے اپنے پروردہ اندین سول سروس کے نمک خواروں کو حکومت سونپ دی گئی تھی ۔ جس پر عوام نے کوئی شور نہ کیا اور پھر جب پہلی منتخب اسمبلی کو چلتا کیا گیا تو بھی کوئی نہ بولا ۔ لیکن محترم ۔ ایک بات یاد رکھیئے ۔ یہ ملک ہمیں اللہ نے لا الہ الاللہ کے نعرے پر دیا اور وہی اس کی حفاظت بھی کرتا ہے ورنہ کیسے کیسے طوفان اس پر سے نہیں گذرے ۔ ان جیسا ایک بھی کسی اور ملک پر گذر جائے تو اس کا نام و نشان مٹ جائے

    جواب دیںحذف کریں
    جوابات
    1. بھائی بہت خوشی ہوئی آپ کو آپنے بلاگ پر دیکھ کر میں خود آپ کابلاگ پڑھتا ہوں۔باقی ہر ایک کا آپنا نظریہ ہوتا ہے اگر فوج کی بات کی جائے تو مشرف کو میں فوج پر دھبہ کہوں گا۔ لیکن جو جوان ہماری خاطر آپنی جانیں دے رہیں ہیں ہمیں ان سے محبت کرنی چاہیے

      حذف کریں

یہ تحریر مصنف کی ذاتی رائے ہے۔قاری کا نظریہ اس سے مختلف ہو سکتا ہے ۔اسلئے بلا وجہ بحث سے گریز کی جائے۔
منجانب حافظ محمد اسفند یار