پہلی عالمی جنگ

مغربی اقوام پہلی عالمی جنگ 1914 کی اپنی اپنی یادیں تازہ کر رہی ہیں
ہماری بھی یہ ایک یادگار ہے!

یہ تصویر 1914ء سنگاپور میں لی گئی تھی- تصویر میں دکھاے گےہندوستانی مسلمان سپاہیوں نے جو کہ اس وقت آل انڈیا برٹش آرمی کا حصہ تھے؛ خلافت عثمانیہ کے خلاف لڑنے سے انکار کر دیا- الله کے یہ شیر ڈٹ گئے اور آخر انکو فائرنگ اسکواڈ نے گولی ماری-
 سلام ہے ان ماؤں کو جنہوں نے یہ نڈر، ایماندار اور غیرت مند بیٹے پیدا کئے- اور کتنا ناز ہوگا رسول الله کو اپنے ان خادموں پر- خدا کی قسم یہی وہ لوگ ہے جن کو جنت کی بشارت ہے-

دوسرا رخ

لیکن تصویر کا دوسرا رخ اور بھی زیادہ اہم ہے- گولی مارنے والے بھی کوئی اور نہ تھے اپنے ہی مسلمان بھائی بندے تھے- فرق صرف اتنا تھا کہ گولی کھانے والوں نے تنخواھوں؛ مراعات ؛ عہدوں اور تمغوں کو ٹھکرا دیا اور شہادت کو پسند کر لیا- جبکے گولی مارنے والوں نے شہادت کو ٹھکرا دیا اور دولت دنیا کو پسند کر لیا-
آج یہ دونوں گروہ اس دنیا میں نہیں- دونوں امتحان کے واسطے دنیا کے کمرہ امتحان میں بھیجے گئے اور امتحان ختم ہونے پر واپس بلا لیے گئے- مگر دونوں برابر نہیں -
ہمیں بھی یہ ضرور سوچنا چاہیے کے ہم ہمارے بھائی   بیٹے اور عزیز کہیں انگریز کے حکم پر گولی مارنے والوں میں سے تو نہیں
نوٹ: جملہ حقوق محفوظ ہیں۔اس آرٹیکل کو بغیر اجازتِ مصنف کسی اور جگہ شائع نہیں کیا جا سکتا۔  از محمد اسفند


تحریر کو شئیر کریں

فیس بک تبصرے

2 تبصرے:

  1. ap k pas koe aysi dastawez ha , jis sy pata chaly k goli maarny waly kon thay ???

    جواب دیںحذف کریں
    جوابات
    1. اگر آپ اس کے بارے میں تفصیل سے مطاللعہ کر لیں تو آپ کو سمجھ آ جائے گی کہ انگریز نے عربوں کو ترکی کے خلاف لڑیا تھا
      مزید آپ ویکی پیڈیا دیکھیں
      https://ur.wikipedia.org/wiki/%D9%BE%DB%81%D9%84%DB%8C_%D8%AC%D9%86%DA%AF_%D8%B9%D8%B8%DB%8C%D9%85

      حذف کریں

یہ تحریر مصنف کی ذاتی رائے ہے۔قاری کا نظریہ اس سے مختلف ہو سکتا ہے ۔اسلئے بلا وجہ بحث سے گریز کی جائے۔
منجانب حافظ محمد اسفند یار